Warm water helpful for Diabetes
Warm water helpful for Diabetes

Warm water helpful for Diabetes.

نیویارک میں ماہرین کا کہنا ہے کہ گرم پانی کے دن آچکے ہیں. نیم گرم پانی سے انسان کو طبی فوائد حاصل ہوتے ہیں. بلکہ دماغ کو بھی سکون ملتا ہے. یہ ذیابیطس کو قابو میں رکھتا ہے اور جسم کے اندرونی صورتحال کو اپنے کنٹرول میں رکھتا ہے. حالیہ سال میں گرم پانی اور سوانا باتھ کے جسمانی فوائد رونما ہورہے ہیں. ایک سروے کے مطابق گرم پانی سے ڈپریشن اور ذہنی تناو میں کمی آتی ہیں اور ایک خوشگوار موڈمیں انسان رہتا ہے. مذید یہ بھی سروے کے مطابق بات سامنے آئی ہے کہ خون کی رگوں کے افعال بہتر ہوتے ہیں.

آج سے 20 سال پہلے یہ تحقیق سامنے آئی تھی. کہ ایک گرم پانی کے ٹب میں اپنے کان ڈوبوئے رکھنے سے بدن کے میٹابولزم پر اثر انداز ہوتا ہے. جس سے ٹاپ 2 ذیابیطس کے مریض کو فائدہ ہوتا ہے. اس کی ایک خاص وجہ یہ بھی ہے کہ ورزش سے ذیابیطس کے مریض کو فائدہ پہنچتا ہے. اسی طرح گرم پانی سے غسل کرنے والا شخص عین ورزش جیسے اثرات مرتب کرتا ہے.
ماہرین کا یہ بھی خیال ہے کہ کم درجے کی لیکن مستقل جسمانی اندرونی جلن بھی انسولین کا نظام خراب کرتی ہیں. ذیابیطس کی شدت میں کمی آتی ہے.

کھیرے کا استعمال کیا رنگ لاتا ہے

ماہرین نے ایک تجربہ کیا اور شرکاء سے چند لوگوں کو ایک گرم پانی کے ٹب میں بیٹھا دیا گیا. جس کا درجہ حرارت 39 سینٹی گریڈ تھا ہر 15 منٹ بعد شرکاء کا بلڈ پریشر چیک کیا گیا. اور ان کی دل کی دھڑکن کو بھی چیک کیا. اگلے 2 ہفتے تک شرکاء کو گرم پانی مین بیٹھایا گیا. اور چیک کرتے رہے ہر مرتبہ غسل کے بعد جسمانی جلن کا ایک مارکرانٹرلیوکن انسانی جسم میں بڑھ گیا.

اس کے ساتھ ہی نائٹرک آکسائیڈ میں اضافے سے خون کی رگوں کو سکون ملتا رہا. اور نائٹرک آکسائیڈ کی پیداوار بڑھتی رہی. سکون دینے کے ساتھ ساتھ یہ بلڈ پریشر کوکم کرتا رہا. نائٹرک آکسائیڈ کیمیکل جسم میں جلن کم کرکے شوگر کو کم کرنے میں مدد دیتا ہے. اس تحقیقات کے مطابق ماہرین نے گرم پانی سے غسل کرنے کا مشورہ دیا ہے.

Is warm water helpful for Diabetes? Yes its helpful. Scientist did experiment on patients, they sit in 39 degree warm water. Its helpful and reduced sugar level and patient feel better.

1 COMMENT

LEAVE A REPLY

Connect with: